Sushant Singh’s Life Australian swimmer Michael Phillips

Sushant Sing Rajput Life
Spread the love

Sushant Singh

A few weeks ago, news came that Sushant Singh Rajput, a popular young actor from India, had committed suicide. Anyone who heard that news was surprised. Even because Sushant Singh was a very famous actor, many of his films were hits and he was popular among the younger generation. Why would a seemingly successful person earning crores of rupees a year suddenly end his life, this idea came to everyone’s mind. Two types of storms arose in India after this incident. After Sushant’s death, it was discovered that he had been cut off from his films by three or four major filmmakers, much to his chagrin. A campaign was launched on social media to discourage nepotism in Bollywood and boycott the companies that cast Starkids. Karan Johar, Aditya Chopra, Salman Khan, Alia Bhatt, Shardha Kapoor, Sonakshi Sharma, something special was written against Sonam Kapoor etc. that these people block the way of newcomers, cast their brothers, nieces, nephews and so on. Kangana Ranaut and two or four others openly accused Karan Johar and others of nepotism. He said that it was because of these cruel attitudes that Sushant and other outsiders like him end their lives in ddes

 

The death of Sushant Singh

There was also noise about Sushant’s death. Some people went to court saying that it was a case of murder instead of suicide.

Indian YouTubers are just like us. Videos are being made on Pakistani YouTube on the world’s nonsense and false news, the common man comes to believe in them without thinking. In India, this work is many times more than us. There are also hundreds of thousands of big YouTubers who have become millions of subscribers. There were also many videos on this incident which tried to prove with various fabricated theories that Sushant did not commit suicide, but killed him. has been.

When Sushant Singh committed suicide

  It was all wrong and a lie. When Sushant Singh committed suicide, he was not alone but had three or four friends besides two employees in his flat. When the police investigated, it was found out that the late actor was a chronic patient of depression and he also had bipolar disorder. He was treated by a Mumbai-based psychiatrist, who had stopped taking drugs shortly before his death. Depression worsened, leading to suicide. The devastation of the will of depression became apparent after Sushant’s death. Earlier, Deepika Padukone, a well-known and popular actress from India, had openly admitted that she had suffered from depression in the past and those days were very painful for her.

Sushant Singh and Australian swimmer Michael Phillips

The next day, while searching the net, I read a report that named many of the world’s most famous people who suffered from depression at some point in their lives. Among them was Australian swimmer Michael Phillips, who set several world records and won several Olympic gold medals. Was also “I’ve had depression for years, but I’ve never told anyone for fear that people will make fun of me and think I’m crazy,” Phillips said. Phillips told the reporter, “Now I understand that a person cannot be well all the time and depression is a normal disease, it should be explained. “

Sushant Singh Hostel

In the days when I was staying in a hostel, a boy working in a nearby room was suffering from depression. I lived in a doctors’ hostel, so the students could understand my partner’s problem. He would not have been ridiculed, but no one had any idea what the real situation of depression was. Two or four times we went to give him company, as is usual, everyone would advise him not to take the tension, relax. Nothing happens and so on. He would answer helplessly, not in my bus. I try my best to be happy, to walk, but it doesn’t work. One day he said that it felt like I was lying in a blind well and there was no one to pull me out. We sympathized with him with great enthusiasm and said that we are with you, do not think alone, etc. The sadness in his eyes could not be lessened. I don’t know where he will be nowadays, he was undergoing treatment, may God bless him.

Sushant Singh Depression

We have very little awareness of depression, people don’t even consider it a disease, they associate it with some madness. Depression is not insanity, it is a mental illness, such as diabetes, blood pressure, etc. Physical illnesses. The symptoms of depression are similar to sadness, so people cannot tell the difference between the two symptoms of depression. Lack of sleep, too much or too little sleep, skin hypertension, extreme fatigue and lethargy, weight loss without effort, lack of energy, not doing things that used to be done happily, self-defeating and These include understanding the burden, not focusing on things, having difficulty making decisions, wanting to die, attempting suicide, and so on. Some of them are due to depression or trauma.

Sushant Singh’s Life

Remember that we all go through a state of grief, sorrow or trauma at some point in our lives. Death of a loved one, loss of employment, termination of career, stigma for some reason, failure of love or break up of marriage, partial disability in an accident, etc. In such a situation, a person spends some time in a state of sadness and anxiety, the memories of the departed make him sad, he does not want to eat, he cannot go anywhere, and so on and so forth. This is a normal state, in a few days a person gradually comes out of this state and this state of sadness is not constant, at some point a person becomes normal and then when he remembers, sadness prevails.

Sushant Singh Depression

In depression, on the other hand, the phase is longer, the patient stays in the same condition for two or three weeks continuously, and the second, the idea of ​​feeling burdened and helpless gains strength in it. Depression can be mild, moderate or severe. In women, it is twice as common as in men. According to experts, one third of women suffer from depression at some point in their lives. There is also a different type of depression in women, some women get depressed after giving birth to a child, in some cases it also happens to a man who becomes a father.

Depression is a disorder that is affecting more and more people. Depression is cured in 90% of cases. Even in more serious cases, treatment does bring some improvement. Most patients with depression need professional help (the help of a psychiatrist or psychologist), so without hesitation, without hesitation, go to the relevant doctor. Happens. Therefore, after treatment, come out of the blind well of depression so that you can stand firm and face the difficulties of life.

 

سوشانت سنگھ

چند ہفتے قبل بھارت کے ایک مقبول نوجوان اداکار سوشانت سنگھ راجپوت کے خودکشی کرنے کی خبر آئی۔ جس کسی نے وہ خبر سنی، حیران ہوا۔اس لئے بھی کہ سوشانت سنگھ خاصا مشہور اداکار تھا، اس کی کئی فلمیں ہٹ ہوئیں اور وہ نوجوان نسل میں مقبول تھا۔ ایک بظاہر کامیاب اور کروڑوں روپے سالانہ کمانے والا شخص اچانک زندگی کیوں ختم کر لے گا، یہ خیال ہر ایک کے ذہن میں پیدا ہوا۔ بھارت میں اس واقعے کے بعد دو طرح کے طوفان اٹھے۔ سوشانت کے مرنے کے بعد پتہ چلا کہ اس کو تین چار بڑے فلم ساز اداروں نے اپنی فلموں سے کٹ کر دیا تھا، اس کا اسے رنج پہنچا۔ سوشل میڈیا پر ایک مہم چلی کہ بالی وڈ میں اقربا پروری کی حوصلہ شکنی کی جائے اور جو ادارے سٹارکڈز کو کاسٹ کرتے ہیں، ان کا بائیکاٹ کیا جائے۔کرن جوہر،ادیتہ چوپڑا ، سلمان خان ، عالیہ بھٹ ،شردھا کپور، سوناکشی شرما ، سونم کپور وغیرہ کے خلاف خاصا کچھ لکھا گیا کہ یہ لوگ نئے آنے والوں کا راستہ روکتے ہیں ، اپنے بھائی ، بھانجوں ، بھتیجوں کو کاسٹ کراتے ہیں وغیرہ وغیرہ۔ کنگنا رناوت اور دو چار دیگر لوگوں نے کھل کر کرن جوہر وغیرہ پر اقربا پروری کے الزامات لگائے۔ان کا کہنا تھا کہ ان سفاک رویوں کی وجہ ہی سے سوشانت اور اس جیسے آﺅٹ سائیڈرز مایوس ہو کر اپنی زندگی ختم کر بیٹھتے ہیں۔

سو شانت سنگھ کی موت

سوشانت کی موت کے حوالے سے بھی شور اٹھا۔ بعض لوگ عدالت میں چلے گئے کہ خودکشی کے بجائے قتل کیس ہے۔

بھارتی یو ٹیوبرز خیر سے ہماری طرح ہیں۔ پاکستانی یوٹیوب پر دنیا جہان کی فضول اور جھوٹی خبروں پر ویڈیوز بنتی رہتی ہیں ، عام آدمی ان پربلا سوچے سمجھے یقین لے آتا ہے۔ بھارت میں یہ کام ہم سے کئی گنا زیادہ ہے۔ وہاں بڑے یوٹیوبرز بھی سینکڑوں ، ہزاروں میں ہیںجن کے کئی ملین سبسکرائبرز بن چکے ہیں۔اس واقعے پر بھی بہت سی ویڈیوز بنیں جن میں مختلف من گھڑت تھیوریز کی مدد سے یہ ثابت کرنے کی کوشش ہوئی کہ سوشانت نے خودکشی نہیں کی، بلکہ اسے قتل کیا گیا۔

سوشانت سنگھ نے جب خود کشی کی

  یہ سب کچھ غلط اور جھوٹ تھا۔ سوشانت سنگھ نے جب خود کشی کی، وہ اکیلا نہیں تھا بلکہ اس کے فلیٹ پر دو ملازمین کے علاوہ اس کے تین چار دوست موجود تھے۔ پولیس نے تحقیقات کیں تو معلوم ہوا کہ آنجہانی اداکار ڈپریشن کے دیرینہ مریض تھے اور انہیں بائی پولر (Bipolar)ڈس آرڈر بھی رہا۔ ممبئی کے ایک ماہر نفسیات سے علاج کراتے رہے، موت سے کچھ عرصہ قبل شائدادویات لینا چھوڑ دی تھیں۔ ڈپریشن بڑھ گیا اور خودکشی تک نوبت چلی گئی۔ سوشانت کی موت کے بعد ڈپریشن کے مرضی کی تباہ کاری نمایاں ہوئی۔ اس سے قبل بھارت ہی کی ایک مشہور اور مقبول اداکارہ دیپیکا پدوکون کھل کر اعتراف کر چکی ہیں کہ وہ ماضی میں ڈپریشن کا شکار رہیں اور وہ دن ان کے لئے خاصے تکلیف دہ تھے۔

سوشانت  سنگھ اور آسٹریلوی پیراک مائیکل فلپس

اگلے روز نیٹ پر کچھ سرچ کرتے ہوئے ایک رپورٹ پڑھی جس میں دنیا کے کئی بہت مشہورلوگوں کے نام بتائے گئے جو زندگی کے کسی مرحلے پر ڈپریشن کاشکار ہوئے۔ان میںکئی عالمی ریکارڈ بنانے اور متعدد اولمپک گولڈ میڈل لینے والے آسٹریلوی پیراک مائیکل فلپس کا نام بھی تھا۔ فلپس نے بتایا کہ مجھے ڈپریشن کا مسئلہ کئی برسوں سے ہے، مگر اس ڈر کے مارے کبھی کسی کو نہیں بتایا کہ لوگ مذاق اڑائیں گے اور پاگل سمجھیں گے۔ فلپس نے رپورٹر سے جملہ کہا،” اب مجھے سمجھ آ گئی ہے کہ ہر وقت آدمی ٹھیک نہیں رہ سکتا اورڈپریشن ایک نارمل بیماری ہے، اس کے بارے میں بتانا چاہیے ۔ “

سوشانت سنگھ   ہاسٹل

جن دنوں ہاسٹل میں مقیم تھا، ان دنوں قریبی کمرے میں ایک ہاﺅس جاب کرنے والا لڑکا ڈپریشن کا مریض تھا۔ میں ڈاکٹرز ہاسٹل میں رہتا تھا، اسی لئے طلبہ اپنے ساتھی کے مسئلے کوکچھ نہ کچھ سمجھ سکے تھے۔ اس کا مذاق تو نہ اڑایا جاتا، مگر ڈپریشن کی حقیقی صورتحال کا کسی کو اندازہ نہیں تھا۔دو چار بار ہم اسے کمپنی دینے گئے، جیسا کہ عام معمول ہے ہر کوئی اسے مشورہ دیتا کہ یار تم ٹینشن نہ لیا کرو، ریلیکس رہو، کچھ نہیں ہوتا وغیرہ وغیرہ۔ وہ بے چارگی سے جواب دیتا، میرے بس میں نہیں۔ اپنی طرف سے خوش رہنے، چِل کرنے کی پوری کوشش کرتا ہوں، مگر بات بنتی نہیں۔ ایک دن اس نے بتایا کہ یوں محسوس ہوتا ہے جیسے میں کسی اندھے کنوئیں میں پڑا ہوں اور کوئی نکالنے والا نہیں۔ اس پر ہم لوگوں نے بڑے جوش وخروش سے اس سے ہمدردی جتائی اور کہا کہ ہم تمہارے ساتھ ہیں، اکیلا نہ سوچا کرو، وغیرہ۔ اس کی آنکھوں میں موجود اداسی کم نہ ہوسکی۔ معلوم نہیں آج کل وہ کہاں ہوگا، علاج کرا رہا تھا، اللہ کرے خیر یت سے ہو۔

سوشانت  سنگھ  ڈپریشن

ہمارے ہاں ڈپریشن کے حوالے سے بہت کم آگہی موجود ہے، لوگ اسے مرض سمجھتے ہی نہیں، کچھ پاگل پن سے ملا دیتے ہیں۔ ڈپریشن پاگل پن نہیں، یہ ایک ذہنی بیماری ہے ، جیسے شوگر، بلڈ پریشر وغیرہ جسمانی بیماریاں ہیں۔ڈپریشن کی علامات اداسی سے ملتی جلتی ہیں، اس لئے لوگ دونوںمیں فرق نہیں کر پاتے۔ڈپریشن کی علامات میں خراب موڈ، کھانے پینے میں اشتہا کی کمی، بہت زیادہ سونا یا بہت کم سونا، جلد ہائپر ہوجانا، شدید تھکن اور سست پڑ جانا، وزن بغیر کوشش کے کم ہوجانا،انرجی کی کمی، وہ چیزیں بھی نہ کرنا جو پہلے خوشی سے کی جاتی تھیں، خود کا ناکارہ اور بوجھ سمجھنا، چیزوں پر فوکس نہ کرنا ، فیصلہ کرنے میں مشکل ، موت کی خواہش، خود کشی کی کوشش وغیرہ شامل ہیں۔ ان میں سے کچھ اداسی یا صدمے کی کیفیات سے ملتی ہیں۔

 سو شانت سنگھ زندگی

یاد رہے کہ ہم سب زندگی کے کسی نے کسی مرحلے پر دکھ، رنج یا صدمے کی کیفیت سے گزرتے ہیں۔ کسی پیارے کی موت، ملازمت چلی جانا، کیرئر ختم ہوجانا، کسی وجہ سے بدنامی ہونا، محبت کی ناکامی یا شادی ٹوٹ جانا، حادثے میں جزوی معذوری وغیرہ ۔ ایسے میں کچھ عرصہ آدمی اداسی اور پریشانی کی کیفیت میں گزارتا ہے، جانے والی کی یادیں غمگیں کر دیتی ہیں، کھانے کا جی نہیں چاہتا، کہیں آنا جانا نہیں ہو پاتا وغیرہ وغیرہ۔ یہ سب نارمل کیفیت ہے،کچھ دنوں میں آدمی بتدریج اس کیفیت سے باہر آ جاتا ہے اور اداسی کی یہ کیفیت مسلسل نہیں ہوتی،کسی وقت آدمی نارمل ہوجاتا ہے پھر جب یاد آئے تو اداسی غالب ہوجاتی ہے۔

سوشانت  سنگھ  ڈپریشن

ڈپریشن میں اس کے برعکس فیز طویل ہوتا ہے، مریض دو تین ہفتے مسلسل اسی کیفیت میں رہتا ہے، دوسرا اس میں اپنے آپ کو بوجھ اور ناکارہ سمجھنے کا خیال طاقت پکڑ لیتا ہے۔خود ترسی کے جذبات بڑھ جانے سے اپنی زندگی اچانک ختم کردینے کی خواہش جنم لیتی ہے۔ڈپریشن ہلکا، درمیانہ یا شدید ہوسکتا ہے۔ خواتین میں یہ مردوں سے دو گنا ہوتا ہے،ماہرین کے مطابق ایک تہائی خواتین زندگی میں کبھی نہ کبھی ڈپریشن کا شکار ہوتی ہیں۔ خواتین میں ڈپریشن کی ایک مختلف قسم بھی موجود ہے، بعض عورتیں بچہ پیدا کرنے کے بعد ڈپریشن میں مبتلا ہوجاتی ہیں، چند ایک کیسز میں باپ بننے والے مرد کے ساتھ بھی ایسا ہوتا ہے۔

ڈپریشن ایک بیماری ہے ، جس کا علاج موجود ہے۔ نوے فیصد کیسز میں ڈپریشن ٹھیک ہوجاتا ہے۔زیادہ سنگین کیسز میں بھی علاج سے کچھ نہ کچھ بہتری ضرور آتی ہے۔ ڈپریشن کے اکثر مریضوں کو پروفیشنل ہیلپ (سائیکاٹرسٹ یا سائیکالوجسٹ کی مدد)درکار ہوتی ہے، اس لئے بغیر شرمائے،بغیر ہچکچائے متعلقہ ڈاکٹر سے رجوع کریں ۔یہ یاد رہے کہ ڈپریشن کے کسی مریض کو کسی صدمے کا سامنا کرنا پڑے تو صورتحال زیادہ خطرناک ہوجاتی ہے۔ اس لئے علاج کر ا کر ڈپریشن کے اندھے کنوئیں سے جلد باہر آئیں تاکہ زندگی کی کٹھنائیوں کا مضبوطی سے کھڑے ہو کر مقابلہ کر سکیں۔

You may also like

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *