Someone happens For us

Someone happens for us
Spread the love

Someone happens Sabiha Naaz’s diary.

Someone happens
For us
somewhere
But in the dust of life
We can’t see
way to
Which we walk on
Goes somewhere
In a city, in a street
To some door
Ages pass
And we are scared when the bell rings
What if there was no house!

Someone happens for us
Is everything happens for a reason true?

 

Someone happens For us
Someone happens For us

 

Someone happens For us
Someone happens For us

 

 

Someone happens For us
Someone happens For us

 

Someone happens For us
Someone happens For us

 

Someone happens For us
Someone happens For us

 

Someone happens For us
Someone happens For us

 

Someone happens For us
Someone happens For us

Someone happens For us

 

 

Someone happens For us
Someone happens For us

Someone happens For us

 

Someone happens For us

 

Someone happens For us

 

Someone happens For us
Someone happens For us

Someone happens For us

 

Someone happens For us
Someone happens For us

Someone happens

Waiting for us
On a balcony and on the terrace
And by the fireplace in the lounge
Cleaning the moisture on the lenses
And looking out the window
And we’re back from work
In the light rain of winter
Umbrella stretched
Avoid splashes of vehicles
In the twinkling lights on the wet streets
Forget the way
And in front of his own house
Let’s go somewhere else!

Someone happens
We have
In the dark and in solitude
On mobile phone
Touching the sound
The sleep of the times whispers
And we dream
Walking on silent passers-by
In foggy weather
Holding each other’s hands
And in the lonely corners
Sitting on benches
Leather like dry leaves
They pile things up
Even the balance runs out!

Someone happens
Like us
In a coffee shop
In a shopping mall
In a park, in a food street
In a train, in a metro, in a bus
On the side of a motorway
And we pass
At high speed
Time flies in both directions
Trees, bushes, huts and huts
Are left behind
Houses perched on flat surfaces
Always in the same pose
Awaiting our return
But where do our feet rest on the ground?
We start touching the clouds on the flying cots
Even the last runway arrives
And we go down
On mandatory areas
Forever  Someone happens

کوئی ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔ صبیحہ ناز

کوئی ہوتا ہے
ہمارے لیے
کہیں نہ کہیں
لیکن غبارِ زیست میں
ہمیں دکھائی نہیں دیتا
راستہ
جس پر ہم چلتے ہیں
کہیں تو جاتا ہے
کسی شہر، کسی گلی میں
کسی نہ کسی دروازے تک
عمریں گزر جاتی ہیں
اور ہم گھنٹی بجاتے ہوئے ڈرتے ہیں
کوئی گھر نہ ہُوا تو کیا ہو گا!

کوئی ہوتا ہے
ہمارا منتظر
کسی بالکونی میں اور ٹیرس پر
اور لاؤنج میں آتش دان کے پاس
عینک کے شیشوں پر آئی نمی صاف کرتے ہوئے
اور کھڑکی سے باہر دیکھتے ہوئے
اور ہم دفتر سے واپسی پر
سرما کی ہلکی ہلکی بارش میں
چھتری تانے ہوئے
گاڑیوں کے چھینٹوں سے بچتے بچاتے
گیلی سڑکوں پر چمکتی ہوئی روشنیوں میں
راستہ بھول جاتے ہیں
اور اپنے ہی گھر کے سامنے
کہیں اور جا نکلتے ہیں!

کوئی ہوتا ہے
ہمارے پاس
اندھیرے میں اور تنہائی میں
موبائل فون پر
آواز کو لمس بناتے ہوئے
زمانوں کی نیند سرگوشیاں کرتی ہے
اور ہم خوابوں کی
خاموش رہگزاروں پر چلتے ہوئے
دھند آلود موسموں میں
ایک دوسرے کا ہاتھ تھامے ہوئے
اور تنہا گوشوں میں
بینچوں پر بیٹھے ہوئے
چرمر سوکھے پتوں کی طرح
باتوں کے ڈھیر لگا دیتے ہیں
یہاں تک کہ بیلینس ختم ہو جاتا ہے!

کوئی ہوتا ہے
ہمارے جیسا
کسی کافی شاپ میں
کسی شاپنگ مال میں
کسی پارک میں، کسی فوڈ اسٹریٹ میں
کسی ٹرین، کسی میٹرو، کسی بس میں
کسی موٹروے کے کنارے
اور ہم گزر جاتے ہیں
انتہائی رفتار سے
وقت دونوں اطراف میں بھاگتا ہے
درخت، جھاڑیاں، ڈھابے اور کھوکھے
پیچھے رہ جاتے ہیں
ہموار سطحوں پر چوکڑی مار کر بیٹھے ہوئے مکان
سدا اسی پوز میں
ہماری واپسی کا انتظار کرتے ہیں
مگر ہمارے پاؤں زمین پر کہاں ٹکتے ہیں
ہم اُڑن کھٹولوں پر سوار بادلوں کو چھونے لگتے ہیں
حتیٰ کہ آخری رن وے آ جاتا ہے
اور ہم اتر جاتے ہیں
لازمانی منطقوں پر
ہمیشہ کے لیے

You may also like

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *